Jashn-e-Azadi Mubrik

 

 Our friend Aziz Ahmad

a.k.a. Mast Qalandar

 has sent me a beautiful

& most probably a self designed

Greetings card on Yom-e-Azadi.

 

MQ’s writings appear

frequently on Pakistani blogs

and I personally like his unique

style of weaving words

into a beautifully crafted

piece of writing.

 

I along with my colleagues

here at WOP wish MQ,

all our viewers and other Pakistanis, where ever they are,

a HAPPY YOM-E-AZADI.

(Nayyar Hashmey)

3 replies to “Jashn-e-Azadi Mubrik

  1. I would like to congratulate the poeple of Pakistan on their 62nd independence day and also for the huge stride they have completed today towards the establishment of democratic institutions.

    Best wishes for a peaceful and prosperous future!

  2. Hi Gursharan,

    Thanks a lot for your very good wishes.Plz do accept likewise our sincere wishes (mine, the viewers of WOP as well as the people of Pakistan on India’s Independence;though belated due to having been out of Lahore).

    This is a time when we are happy because of our independence and seconndly that we have got rid of a General’s rule. With democracy (however fragile it may be)I do hope and believe both India and Pakistan can usher into an era of relative peace, a peace witch would ensure the security, the progress and the well being of people of India and Pakistan.

    Once again Gurshi, a happy Indpendencd Day to you, your family and the people of India.

    Nayyar Hashmey
    and the Wop Team in Lahore

  3. سوہنی دھرتی اللہ رکھے قدم قدم آباد تجھے
    سوہنی دھرتی اللہ رکھے قدم قدم آباد تجھے

    تیرا ہر اک ذرہ ہم کو اپنی جان سے پیارا
    تیرے دم سے شان ہماری تجھ سے نام ہمارا
    جب تک ہے یہ دنیا باقی ہم دیکھیں آزاد تجھے
    سوہنی دھرتی اللہ رکھے قدم قدم آباد تجھے

    دھڑکن دھڑکن پیار ہے تیرا قدم قدم پر گیت رے
    بستی بستی تیرا چرچا نگر نگر ہے میت رے
    جب تک ہے یہ دنیا باقی ہم دیکھیں آزاد تجھے
    سوہنی دھرتی اللہ رکھے قدم قدم آباد تجھے

    تیری پیاری سج دھج کی ہم اتنی شان بڑھائیں
    آنے والی نسلیں تیری عظمت کے گن گائیں
    جب تک ہے یہ دنیا باقی ہم دیکھیں آزاد تجھے
    سوہنی دھرتی اللہ رکھے قدم قدم آباد تجھے

    سوہنی دھرتی اللہ رکھے قدم قدم آباد تجھے

    اب کہاں جاؤ گے اے دیدہ ورو؟
    اب تو اِس سمت بھی ظلمت ہے
    جہاں شب کے آلاؤ میں نہا کر
    !مرے سورج کو نکلنا تھا
    !گجر بجنے تھے
    اب تو مشرق پہ بھی مغرب کا گماں ہوتا ہے
    اب تو جب ذکر کرو نور ِ سحر کا
    تو بلک اٹھتی ہے دنیا کہ کہاں ہوتا ہے؟

    مگر ایک پل ہے امید کا
    ہے مجھے خدا کا جو آسرا

    rose5.gif

    چشمکِ انجم

    حیات نو تری جیب ددیدہ میں
    کیا تھا رشتہ انفاس سے رفو ہم نے

    بتا اے صبحیہ محشر خرام ِ آزادی
    تجھے تلاش کیا تھا نہ کو بہ کو ہم نے

    خزاں نصیب ہیں لیکن نگار ِ گلشن کو
    عطا کیا سرو سامانَِ رنگ و بو ہم نے

    کبھی مورخ فصل جنوں سے کر معلوم
    کیا ہے کتنے ہی مقاتل کو سر خرو ہم نے

    امام شہر سے پوچھ اُس نماز خوف کا حال
    کیا تھا جس کے لیے خون سے وضو ہم نے

    ہو چشمک انجم نصیب ِ خوش نظری
    یونہی تو کی تھی شعاعوں کی جستجو ہم نے

    یہی کہو، ہمیں لب تشنگی ہی راس آئے
    پیا ہے زہر ملامت کنار جو ہم نے

    خود اپنے آپ کو الجھا لیا، یہی تو کیا
    سنوار کر تری زلفوں کو مو بہ مو ہم نے

    ہو صرف باغیچہ قصر اہل زر شاداب
    اسی غرض سے بہایا تھا کیا لہو ہم نے

    نگاہ میں کوئی صورت، بجز غبار نہیں
    یہ وہ بہار نہیں، یہ وہ بہار نہیں

    14thug.gif

    ——————–

    قائد اعظم محمد علی جناح اور ریاست بہاولپور کے نواب
    کا ایک یادگار تصویر یہ اس موقع پہ ہے جب ریاست
    نے پاکستان میں شمولت کا اعلان کیا تھا اور یہ تاریخ
    تھا 7 اکتوبر 1947،قیام پاکستان کے وقت گیارہ آزاد ریاستیں تھیں
    جو سب بعد میں پاکستان کا حصہ بن گئیں

    ایک اور تصویر یو قیام پاکستان کے بعد 18 ستمبر 1947 کو کراچی کے پہلے
    سینما کے افتتاح پر جو پہلی فلم ریلز ہوئی وامق عذرا کا نام سے جس کے
    فلم ساز کار نذیر تھے مویسقی اے آر قریشی نے
    لکھا تھا

    ]

    آزدی کشمیر کا پہلا گولی

    14 اگست 1947 کو جب پاکستان وجود میں ایا تو جموں کشمیر کے مسلمانوں میں
    کوشی کا لہیر دوڑ گیا مگر ریاست کے راجی نے اپنے طور پر انڈیا سے
    الحاق کا فیصلہ کر لیا 23 اگست 1947 نیلا بٹ کے مقام (تحصیل باغ ( میں کشمیر
    کے سرگردہ افراد نے ڈوگرہ راج ست آزادی کا فیصلہ کیا ایک مسلح نواجوان
    سرادار عبدالقیوم خان نے اس اعلان کے بعد 28 اگست 1947 کو اپنے
    گاوں غازی آباد میں ارجا نالے میں پڑاو ڈالے ہوئے ڈوگرہ سپاہیوں پر حملہ
    کر کے آزادی کا پہلا گولی چلایا جس میں تین سپاہی ہلاک ہوئے
    پہلی گولی چلانے کی وجہ سے سردار عبدلاقیہوم کا مجاہد اول بھی
    کہا جاتا ہے۔ یہ بعد مین ازاد کشمیر کا وزیر اعظم بھی بنے

    Attached Image
    – Ishq na hosi dil wich, rab na hosi razi
    na ban mumin na ban kafir, na pandath na kazi
    bulleh shah uth, yaar manale, la ke sir di baazi —

    Raatein Jaagi Te Shika Sada Wayn
    Per Raat Nu Jagan Kutte Tein Tii Uthe
    Raatein Bhonko Buss Na Karday
    Fayr Ja Larran Vich Sutay Te Tii Uthe
    Yaar Da Buuha Mool Na Chadd De
    Pawein Maro So So Jutay Te Tii Uthe
    Bulleh Shah Uth Yaar Mana Le
    Nai Te Baazi Le Gaye Kutte Tein Ti Uthe

    احمد ندیم قاسمی کی ایک نظم

    14thug.gif
    Attached image(s)
    Attached Image

    ISLAMIC REPUBLIC OF PAKISTAN
    Motto:- Ittehad, Tanzim, Yaqeen – e- Muhkam (Unity, Faith Dicipline)
    State Logo
    Pakistan’s Flag
    Map of Pakistan
    Music Sheet of Pakistani National Anthem
    Pakistan Natioal Song in Urdu

    جب ہم نے خدا کا نام لیا

    اس نے ہمیں انعام دیا

    پاکستان پاکستان، پاکستان پاکستان

    میرا انعام پاکستان

    پاکستان پاکستان، پاکستان پاکستان

    میرا پیغام پاکستان

    پاکستان پاکستان، پاکستان پاکستان

    محبت امن ہے ہے اور امن کا پیغام پاکستان

    پاکستان پاکستان، پاکستان پاکستان

    میرا پیغام پاکستان

    خدا کی خاص رحمت ہے، بزرگوں کی بشارت ہے

    کئی نسلوں کی قربانی، کئی نسلوں کی محنت ہے

    اثاثہ ہے دلیروں کا شہیدوں کی امانت ہے

    تعاون ہی تعاون ہے، محبت ہی محبت ہے

    جبھی تاریخ نے رکھا ہے اس کا نام پاکستان

    پاکستان پاکستان، پاکستان پاکستان

    اندھیروں کو مٹائیگا، اجالا بن کے چھائیگا

    یہی کا انقلابی ہے، نئی دنیا بنائیگا

    اگر اللہ نے چاہا زمانہ وہ بی آئیگا

    جہاں تک وقت جائیگا، اسے آگے ہی پائیگا

    ندا قائد کی ہے، اقبال کا الہام پاکستان

    پاکستان پاکستان، پاکستان پاکستان

    میرا انعام پاکستان

    پاکستان پاکستان، پاکستان پاکستان

    میرا پیغام پاکستان

    پاکستان پاکستان، پاکستان پاکستان

    محبت امن ہے ہے اور امن کا پیغام پاکستان

    پاکستان پاکستان، پاکستان پاکستان

    میرا پیغام پاکستان

    پاکستان پاکستان، پاکستان پاکستان

    جناب سنیئے گا ضرور

    Pakistan national song in English
    ENGLISH TRANSLATION
    Blessed be the sacred Land
    Happy be the bounteous realm
    Symbol of high resolve
    Land of Pakistan
    Blessed be thou citadel of faith
    The order of this sacred land
    Is the might of the brotherhood of the People
    May the nation, the country, and the state
    Shine in glory everlasting
    Blessed be the goal of our ambition
    This Flag of the Crescent and Star
    Leads the way to progress and perfection
    Interpreter of our past, glory of our present
    Inspiration of our future
    Symbol of Almighty’s protection
    Great Leader and Founder of Pakistan Quid-e-Azam Muhammed Ali Jinnah (R.A)
    National Poet, Philosopher & the Thinker of Pakistan Doctor. Allama Muhammed Iqbal (R.A)
    First Prime Minister of Pakistan Mr. Nawab Liaqat Ali Khan
    Mother of the Nation (Mader-e-Millat) Miss Fatima Jinnah
    National Flower of Pakistan – Jasmine
    Chambeli
    National Bird of Pakistan – Chukar (Red Legged Partridge)
    National Animal of Pakistan
    The Markhor (Capra falconeri) is a Goat Antelope found in sparse woodland in the Western Himalayas.
    National Fruit of Pakistan, Mangifera Indica (immature Black Mango Fruit)
    National Tree of Pakistan – Deodare (Himalayan Cedar)
    National Mosque In Islamabad (Capital of Pakistan)
    Tomb of Great Leader & Founder of Pakistan (Quide-e-Azam) Muhammed Ali Jinnah (R.A) in Karachi, Pakistan.
    Minar – e – Pakistan
    Badshahi Masjid Lahore.
    Faisalabad Clock Tower
    Quid Residency Ziarat Balouchistan
    Bab – e – Khyber (NWFP)
    University of Punjab Lahore
    K – 2 Pakistan
    The Hunza Valley
    Indus River
    The mountain of Koh – e – Karakoram
    Hockey – National Game of Pakistan
    Jahangir Khan
    Jansher Khan
    Imran Khan with 1992 World Cup Trophey
    Pakistani Cricket Team (T-20 Champion)
    Pakistan’s National Hero
    National Hero Mr. Dr. Abdul Qadeer Khan (A. Q. Khan) Founder of Pakistani Nuclear Bomb mostly known as Islamic Bomb. Due to him Pakistan become the 1st Islami & World 7th Nuclear State.
    Heroes of Pakistan (Guards of Pakistan) (Nishan-e-Haider)
    Proud 2 b Pakistani. Proud To Be Pakistani
    __________________
    or bhi share karu gi
    __________________
    Azadi

    Girlz ke liyeh :
    Cricket fans ke liyeh..
    HUNZATIMES-YRYYRT

    Allama Iqbal – Jawanoon Ko Mere Aah o Sehar Day
    Jashan e Azadi Mubarak – Designer: Creative Sign
    Azadi Mubarak – Designer: Creative Sign
    Azadi Tujhay Salam – Designer Creative Sign
    Aye Watan Payaray Watan – Designer: Creative Sign
    Jashan e Azadi Mubarak – Designer: Creative Sign
    Jeevay Jeevay Pakistan – Designer Creative Sign
    Dil Dil Pakistan – Designer: Ik Pagla
    Dil Dil Pakistan – Designer: Creative Sign
    Jashan e Azadi Pakistan Mubarak – Designer Creative Sign
    Mere Pehchaan Pakistan – Designer: Creative Sign
    Salam Pakistan – Designer: Creative Sign

    چاند میری زمیں پھول میرا وطن
    میرے کھیتوں کی مٹی میں لعلِ یمن

    میرے ملاح لہروں کے پالے ہوئے
    میرے دہقاں پسینوں کے ڈھالے ہوئے
    میرے مزدور اس دور کے کوہ کن
    چاند میری زمیں پھول میرا وطن

    میرے فوجی جواں جرّاتوں کے نشاں
    میرے اہلِ قلم عظمتوں کی زباں
    میرے محنت کشوں کے سنہرے بدن
    چاند میری زمیں پھول میرا وطن

    میری سرحد پہ پہرا ہے ایمان کا
    میرے شہروں پہ سایہ ہے قرآن کا
    میرا ایک اک سپاہی ہے خیبر شکن
    چاند میری زمیں پھول میرا وطن

    میرے دہقاں یونہی ہل چلاتے رہیں
    میری مٹی کو سونا بناتے رہیں
    گیت گاتے رہیں میرے شعلہ بدن
    چاند میری زمیں پھول میرا وطن
    Pakistan Zindabad – Designer: Creative Sign
    Jashan e Azadi Mubarak – Designer: Creative Sign
    Khuda Karay Ke Meri Arz-e-Pak Per Utray
    Wo Fasl-e-Gul Jisay Andesha-e-Zawaal Na Ho
    Yahan Jo Phool Khilay, Khila Rahay Sadi’on
    Yahan Khizaan Ko Guzarnay Ki Bhi Majaal Na Ho
    Yahan Jo Sabza Ugay, Hamesha Sabz Rahay
    Aur Aisa Sabz Ke Jis Ki Koi Misaal Na Ho
    Khuda Karay Ke Na Kham Ho Sir-e-Waqar-e-Watan
    Aur Is Ke Husn Ko Tashweesh-e-Mah-o-Saal Na Ho
    Her Aik Fard Ho, Tahzeeb-o-Fun Ka Oaj-e-Kamaal
    Koi Malool Na Ho, Koi Khasta Haal Na Ho
    Khuda Karay Ke Meray Aik Bhi Hum’Watan Ke Leay
    Hayaat Jurm Na Ho, Zindagi Wabaal Na Ho
    Khuda Karay Ke Meri Arz-e-Pak Per Utray
    Wo Fasl-e-Gul Jisay Andesha-e-Zawaal Na Ho

    اے نگارِ وطن تو سلامت رہے
    اے نگارِ وطن تو سلامت رہے

    مانگ تیری ستاروں سے بھر دیں گے ہم
    تو سلامت رہے
    تو سلامت رہے
    اے نگارِ وطن تو سلامت رہے

    ہو سکی تیرے رخ پر نہ قرباں اگر
    اور کس کام آئے گی یہ زندگی
    اپنے خوں سے بڑھاتے رہیں گے سدا
    تیرے گل رنگ چہرے کی تابندگی

    جب تجھے روشنی کی ضرورت پڑی
    اپنی محفل کے شمس و قمر دیں گے ہم
    تو سلامت رہے
    تو سلامت رہے
    اے نگارِ وطن تو سلامت رہے

    سبز پرچم تیرا چاند تارے تیرے
    تیری بزمِ نگاری کے عنوان ہیں
    تیری گلیاں، تیرے شہر، تیرے چمن
    تیرے ہونٹوں کی جنبش پہ قربان ہیں

    جب بھی تیری نظر کا اشارہ ملا
    تحفَہِ نفسِ جاں پیش کر دیں گے ہم
    تو سلامت رہے
    تو سلامت رہے
    تو سلامت رہے

    jashneazadi1.jpg
    jashneazadi2.jpg
    jashneazadi3.jpg

    آؤ بچو، سیر کرائیں تم کو پاکستان کی
    جس کی خاطر ہم نے دی قربانی لاکھوں جان کی
    پاکستان زندہ باد! پاکستان زندہ باد

    آؤ بچو، سیر کرائیں تم کو پاکستان کی
    جس کی خاطر ہم نے دی قربانی لاکھوں جان کی
    پاکستان زندہ باد! پاکستان زندہ باد

    دیکھو یہ ہے سندھ یہاں ظالم داہر کا ٹولہ تھا
    یہیں محمد بن قاسم اللہ اکبر بولا تھا
    ٹوٹی ہوئی تلواروں میں کیا بجلی تھی، کیا شعلہ تھا
    گنتی کے کچھ غازی تھے، لاکھوں کا لشکر ڈولا تھا
    یہاں کے ذرے ذرے میں اب دولت ہے ایمان کی
    جس کی خاطر ہم نے دی قربانی لاکھوں جان کی
    پاکستان زندہ باد! پاکستان زندہ باد

    پاکستان زندہ باد! پاکستان زندہ باد

    یہ اپنا پنجاب سجا ہے بڑے بڑے دریاؤں سے
    جگا دیا اقبال نے اس کو آزادی کے نعروں سے
    اس کے جوانوں نے کھیلا ہے اپنے خون کے دھاروں سے
    دشمن تھرا جاتے ہیں اب بھی ان کی للکاروں سے
    دور دور تک دھاک جمی ہے یہاں کے شیر جوان کی
    جس کی خاطر ہم نے دی قربانی لاکھوں جان کی
    پاکستان زندہ باد! پاکستان زندہ باد

    پاکستان زندہ باد! پاکستان زندہ باد

    یہ علاقہ سرحد کا ہے سب کی نرالی شان یہاں
    بندوقوں کی چھاؤں میں بچے ہوتے ہیں جوان یہاں
    ٹھوکر میں زلزلے یہاں ہیں، مٹھی میں طوفان یہاں
    سر پہ کفن باندھے پھرتا ہے دیکھو ہر اک پٹھان یہاں
    قوم کہے تو ابھی لگا دے بازی یہ سب جان کی
    جس کی خاطر ہم نے دی قربانی لاکھوں جان کی
    پاکستان زندہ باد! پاکستان زندہ باد

    پاکستان زندہ باد! پاکستان زندہ باد

    ایک طرف خیبر دیکھو، سرحد کی شان بڑھاتا ہے
    شیر خدا کی قوت کا افسانہ یہ دہراتا ہے
    ایک طرف کشمیر ہمیں جنت کی یاد دلاتا ہے
    یہ راوی اور اٹک کا پانی امرت کو شرماتا ہے
    پیارے شہیدوں کا صدقہ ہے دولت پاکستان کی
    جس کی خاطر ہم نے دی قربانی لاکھوں جان کی
    پاکستان زندہ باد! پاکستان زندہ باد

    آؤ بچو، سیر کرائیں تم کو پاکستان کی
    جس کی خاطر ہم نے دی قربانی لاکھوں جان کی
    پاکستان زندہ باد! پاکستان زندہ باد
    jashneazadi4.jpg
    Jashan e Azadi Mubarak – Designer: Creative Sign
    Khuda Karay Mere Arz e Pak Pay – Designer: Ik Pagla

    Tariq Raheel


    Jashan e Azadi Pakistan Mubarak – Designer Creative Sign
    ~*~ MuSaLmaNo MaiN PaIdA PhIR KoI SheeR-e-KhuDa KaR Dey ~*~
    ~*~ Merey Ma’AbooD HuM Main PhiR Koi KhauLa Si DuKhTaR De~*~
    ~*~ Nahin AbB DeKhI JaTi HaIy KhUdA MiLLat ki BaRbaDi ~*~
    ~*~ KhuDaya PhiR AtA KaR MasJid-e-AqSa Ko AzAdi ~*~

    صوبائی کابینائوں کی حلف برداری

    16اگست 1947 کو مغربی پاکستان سندھ اور مشرقی بنگال میں صبائی وزرائے اعلی
    اور ان کی کابینائوں نے اپنے عہدوں کے حلق اٹھائے

    مغربی پنجاب میں افتخار احغمد ممدوٹ نے وزارت بنایا اور مندرجی ذیل ارکان
    کو اپنی کابینہ میں شامل کیا ا، انہوں نے قانون، جنرل ایڈمنسٹریشن اور جیل جات کے
    محکمے اپنے پاس رکھے جبکہ دیگر محکموں کے اور ان کے وزرا مندرجہ ذیل ہیں

    سردار شوکت حیات خان
    ریونیو بجلی، آبپاشی جنگلات ار حیوانات

    میاں ممتاز محمد خان دولتانہ

    خزانہ صنعت، سول سپلائیز

    شیخ کرامت علی

    تعلیم لوکل باڈیز، سڑکیں ، تعمیرات، میڈیکل

    میاں افتخار

    مہاجرین

    افتخار ممدوٹ کا ایک تصویر

    ۔۔1964 میں پاکستان ٹیلی ویژن کا سفر ایک چھوٹا سا کمرے سے ہوا تھا
    دنیا 1926میں ٹی وی سے روشناس ہوا اور پاکستان کو 1964 میں
    ٹی وی ملا اس طرح دنیا کے اور پاکستان کی ٹی وی میں 38 برس کا
    فاصلہ ہے 14thug.gif

    برطنایہ پہلا ملک ہے جس نے ٹی وی کی نشریات شروع کیا
    پاکستان دنیا کا 92 واں اور مسلم دنیا کا بیسواں ملک تھا جو
    اس وقت ٹی وی سے روشناسی ہوا

    پی ٹی وی کا سب سے پہلا

    پروگرام ہمارے دستکار اور اس کا میزبان مسز اختر عباسی لاہور ٹی وی 14thug.gif

    کوئز پروگرام بوجھو تو جانیں میزبان اشفاق احمد لاہور ٹی وی 14thug.gif

    ڈرامہ نذرانہ اس کو تحریر کیا تھا نجمہ فاروقی اور پروڈیوس کیا تھا فضل کمال نے 14thug.gif

    بچوں کا سب سے پہلا پروگرام

    جہاذ خود بنائو اس کا میزبان تھا زیڈ منظر، فاروق رعنا ہاروں خان 14thug.gif

    میوزک کا پہلا پروگرام

    لوک گیت

    اس کے فنکار تھے طفیل نیازی سائیں اختر

    پہلا تاریخی ڈرامہ

    ماضی کے آگے اس کو صفدر میر نے تحریر کیا تھا

    مقبول ترین سریز

    الف نون اس کو کمال احمد رضوی نے تحریر کیا تھا

    مقبول ترین سریل

    خدا کی بستی جس جو شہرہ اٍاق مصف شوکت صدیقی نے لکھا تھا

    مقبول ترین شو

    ضیا محی الدین شو

    بین الاقوامی ایوارڈ یافتہ دستاویزی فلم

    مہونجو داڑو 73 اس کو تحریر کیا تھا جاوید جبار نے

    پہلا ڈرامہ

    پت جھڑ کے بعد

    اس کو ٹھریر کیا تھا حمید کاشمیری نے پروڈیوس کیا تھا محسن علی نے

    پہلا رنگین پروگرام کلیاں فاروق قیصر

    پہلا رنگین ڈرامہ سریل

    پرچھائیاں اس کو حسینی معین نے لکھا تھا

    موج بڑھے یا آندھی آئے ، دیا جلائے رکھنا ہے
    گھر کی خاطر سو دکھ جھیلیں ، گھر تو آخر اپنا ہے
    بال بکھیرے اُتری برکھا ، رُوپ لٹاتا چاند
    کیا پل بھر کو اٹھی آندھی ، تارے پڑ گئے ماند
    رات کٹھن یا دن ہو بوجھل
    رات کٹھن یا دن ہو بوجھل ، ہنستے گاتے چلنا ہے
    گھر کی خاطر سو دکھ جھیلیں گھر تو آخر اپنا ہے

    لہروں لہروں اترا سورج ، بستی بستی رُوپ
    جاگ اٹھے تیرے موتی مونگے ، ناچ رہی کیا دھوپ
    ناؤ بڑھا ، پتوار اٹھا
    ناؤ بڑھا ، پتوار اٹھا
    ناؤ بڑھا ، پتوار اٹھا پھر سات سمندر مدھنا ہے
    گھر کی خاطر سو دکھ جھیلیں گھر تو آخر اپنا ہے

    Junoon Se … Aur Ishq Se … Milti hai
    !!!… Azaadi … !!!
    Qurbani ki Rahoun Mein … Milti hai
    !!!… Azaadi … !!!

    Reply with quote
    ()()______######################
    ()()______######################
    ()()______######################
    ()()______######################
    ()()______#######_#####*########
    ()()______######_#####***#######
    ()()______#####__####*****######
    ()()______#####__#####***#######
    ()()______#####__######*########
    ()()______#####__###############
    ()()______#####___##############
    ()()______#####____#############
    ()()______######____#####_######
    ()()______#######_________#######
    ()()______#########_____#########
    ()()______######################
    ()()______######################
    ()()
    ()()
    ()()
    ()()
    ()()
    ()()
    KhanewalFun http://www.Chishty.Uni.Cc
    KhanewalFun http://www.Chishty.Uni.Cc
    KhanewalFun http://www.Chishty.Uni.Cc
    KhanewalFun http://www.Chishty.Uni.Cc
    Jashan e Azadi Wallpapers

    Chat DD Forums
    Punjab ki Pehchan Hoo tum,
    Balochistan ki Jaan hoo tum,
    Sarhad ka Armaan ho tum,
    Sindh ki jaan hoo tum,
    aur Pakistan ka Naam ho tum
    Happy Independance Day in Advanced
    Azadi k din aaj meri dua hai k
    ALLAH aap ko Quaid ki aqal,
    Iqbal ki shakal, Liaqat ki Shairvani,
    Fatima ki jawani, Nehru ki chaal
    aur gandhi g k baal day.
    JASHAN-E-AZADI MUBARK
    Sare Jahan se pyara Pakistan Hamara,
    Ham Bulbul hain iss ke ye Gulistan hamara,
    HAPPY INDEPENDES DAY in Advanced
    Ae mere watan ke logo,
    Zara utho sambhlo, jago,
    Dekho dekho ye politican,
    Kahan le chale tumhare watan ko.
    Ab bhi waqt hai,
    Cheen lo inke hathon se,
    Apne pyare watan ko,
    Aur bana do isse Quaid ka Pakistan

    Chat DD Forums

    awesomeeeeeeeeeeeeee workkkkkkkkkkkkkkkkkk chamakkkkkkkkkkkkkkkkkkkkkkkkkkkkk
    pakistan zindabaadddddddddddddddddddddddd Allah swt hamara pakistan ko apna aman main rakhain
    Ameen sum Ameen superbbbbbb collectionzz mastttttt thread

    14 اگست اور 15 اگست کی درمینای شب بمطابق 27 رمضان المبارک 1366 ھ رات
    ٹھیک بارہ بجے دنیا کے نقشے پر ایک ازاد اور خودمختار اور دنائے اسلام کی
    سب سے بڑی مملکت کا اضافہ ہوا جس کا نام پاکستان ہے

    اس سے قبل جمعرات 14 اگست 1947 کو صبح نو بجے دستور ساز اسمبلی کے ایک
    خصوصی اجلاس میں ہندوستان کے اخری وائسرائے لارڈ ماونٹ بیٹن نے پاکستان کی
    آزادی اور اقتدار کی منتقلی کا اعلان کیا۔۔صبح ہی سے عمارت کے سامنے پرجوش عوام جمع
    تھے جب پکستان کے نامزد گورنر جنرل حضرت قائد اعظم محمد علی جناح اور لارڈ ماونٹ
    بیٹن ایک مخصوص بگھی میں سوال اسمبلی ہال میں پہنچے تو عوام نے پرجوش نعروں
    اور تالیوں سے ان کا استقبال کیا، اسمبلی کی تمام نشستیں پر تھیں گیلری میں ممتاز شہریوں
    سیاست دانوں ملکی اور غیر ملکی اخباری نمائیندوں کی بھاری تعدار موجود تھی

    کرسی صدارت پہ دستور ساز اسمبلی کے صدر جناب حضرت قائد اعظم محمد علی جناح
    تشریف فرما تھے ان کے برابر لارڈ ماونٹ بیٹن کی نشست تھی
    دونوں اکابرین نے جب اپنی اہپنی نشست سنباھلی تو اسمبلی کی اکرروائی کا باقاعدہ
    اغاز ہوا

    سب سے پہلے لارڈ ماونٹ بیٹن نے شاہ امگلستان کا پیغام پڑھ کر سنایا جس میں قائد اعظم
    کو مخاطب کر کے کہا گیا تھا

    برطانوی دولت مشترکہ کی اقوام کی صف میں شامل ہونے والی نئی ریاست کے قیام
    کے عظیم موقع پر میں اپ کو دلی مبارک پیش کرتا ہوں اپ نے جس طرح آزادی ھاصل
    کی وہ ساری دنیا کے حریت پسند عوام کے لیے ایک مثال ہے میں توقع رکھتا ہوں
    کہ برطانوی دولت مشترکہ کے تمام ارکان جمہوری اصولوں کو سربلند رکھنے میں اپ
    کا ساتھ دیں گے

    اس پیغام کے بعد لارڈ مونٹ بیٹن نے الواداعی تقریر کی اور پاکستان اور پاکستانی عوام
    کے لیے دعا مانگی

    لارڈ ماونٹ بیٹن کے بعد قائد اعظم محمد علی جناح نے اپنی تقریر کا اغاز کیا انہوں نے
    سب سے پہلے شاہ انگلستان اور وائسرائے کا شکریہ ادا کیا انہیں یقین دلایا کہ ہمارا ہمسایوں
    سے بہتر اور داستانہ جذبہ کبھی کم نہ ہوگا اور ہم ساری دنیا کے دوست ہیں

    اسمبلی کی کارروائی اور اعلان آزادی کے بعد قائد اعظم محمد علی جناح لاررڈ مونٹ بیٹن
    کے ہمراہ شاہی بگھی میں سوار ہو کر گورنر جنرل ہاوس میں پہنچے دوپہر
    دو بجے لارڈ ماونٹ بیٹن نئی دہلی روانہ ہو گئے جہاں اسی رات 12 بجے بھارت کی ازادی کے
    اعلان کے ساتھ ہی انہیں بھارت کے گورنر جنرل کا منصب سنبھالنا تھا

    دو بہت ہی نایاب اور یادگار تصویریں

    آزادی کا پہلا دن

    لارڈ ماونٹ بیٹن، انتقال اقتدار سے پہلے سلامی ملیتے ہوئے

    محمد علی جناح 14 اگست کو دستور ساز امبلی سے خطاب کرتے ہوئے

    کراچی میں علامہ شبیر احمد عثمانی اور ڈھاکہ میں مولانا ظفر احمد عثمانی نے پاکستان کا
    پرچم لہرانے کی رسم سر انجام دی

    خدا کرے کہ میری ارضِ پاک پر اترے
    وہ فصلِ گل جسے اندیشہِ زوال نہ ہو

    یہاں جو پھول کھلے وہ کھلا رہے صدیوں
    یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو

    یہاں جو سبزہ اگے وہ ہمیشہ سبز رہے
    اور ایسا سبز کہ جس کی کوئی مثال نہ ہو

    خدا کرے کہ نہ خم ہو سرِ وقارِ وطن
    اور اس کے حسن کو تشویشِ ماہ و سال نہ ہو

    ہر ایک فرد ہو تہزیب و فن کا اوجِ کمال
    کوئی ملول نہ ہو کوئی خستہ حال نہ ہو

    خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کیلئے
    حیات جرم نہ ہو زندگی وبال نہ ہو

    احمد ندیم قاسم

    Other Wallpapers: Jashn-e-Azadi

    Name: itdgpak.jpg Views: 23 Size: 68.7 KB

    The Mighty 14thug.gif

    The Massive 14thug.gif

    The Dangerous 14thug.gif

    The Lethal 14thug.gif

    The Killer Peak 14thug.gif

    The King 14thug.gif

    The Killer Mountain 14thug.gif

    One and Only The Nanga Parbat.

    Pride of Pakistan 14thug.gif
    سرزمین و خواب خیال

    بات جب بھی وطن کا ہم نہ بھی لکھنا چاہیے ہاتھ خود لکھنے کو بے چین
    ہوجاتے ہمیں اس حد تک خوشی بتا نہیں سکتے کہ پاکستان کا آزادی منانے
    کو یہاں الگ سیکشن بنا ہم شکر گزار ہیں

    پاکستان کو بنے ہوئے 62 سال ہو چکے ہمارے اجداد نے حضرت قائد اعظم محمد علی
    جناح کی قیادت میں طویل جنگ لڑا جس میں قید و بند کی صوبتیں ایک طرف ہزاروں مائوں
    نے اپنے جگر گوشوں کی شہادت، ہزاروں بیہنوں نے اپنی عظمت و عفت کےک نذرانے
    دے کر اور ہزاروں معصوموں نے اور بوڑھوں نے اپنی جانوں کی بازی ہار کر آزادی
    کی صبح دیکھی۔۔ یہ ان کی بے ً‌مثال قربنیاں ہی ہیں کہ آج ہم اس پاک وطن مملکت خدادا
    کے مرغزاروں اس کےقصبوں، ریگزروں، اس کے شہروں میں اپنی آزاد فضائوں میں
    محو نازاں ہیں یہاں کی سر سبز وادیاں ہمیں زندگی کے جبر سے آزاد کئے ہوئے ہیں

    ہم نے اے سرزمین خواب و خیال
    تجھ سے رکھا ہے شوق کو پر حال

    حسن فردا کے خواب دیکھے ہیں
    شوق نے تیری خواب گاہوں میں
    ہم نے اپنا سراغ پایا ہے
    تیری گلیوں میں تیری راہوں میں

    اس کے دامن میں جاری دریا اورا س کی تہوں میں میں چھپے خزانے ہماری
    توانائیوں کے جواب میں اپنا سب کچھ نچھاور کرنے کو تیار ہیں اس کے
    پہاڑوں کی بلندی اور سمندر کی وسعتیں ہماری ہمتوں کی آزامئیش کے لیے
    محو انتظار ہے جس طرح ہمارے اجداد نے آقائے دو جیاں رحمت دو عالم
    حضرت محمد صلی علیہ واسلم کی رہنمائی میں اسلام کے پیغام برحق کو
    جزیرہ ہائے عرب کے ریگزاروں سے نکال کر دنیائے عالم کے گوشے گوشے
    تک پہنچایا تھا ہمیں بھی اج اسی جذبہ اور ایمان کے ساتھ رخت سفر باندھنا ہوگا
    انشاللہ اللہ کی طرف سے فتح و نصرت کے دروازے کھلتے جائیں گے

    یہ بڑی سازگار مہلت ہے
    یہ زمانہ بہت غنیمت ہے

    شوق سے ولولے طلب کر لیں
    جو نہ اب تک کیا وہ اب کر لیں

    خوش بدن پیرہن ہو سرخ ترا
    دلبر بانکپن ہو سرخ ترا
    ہم بھی رنگین ہوں پرتو گل سے
    جوش ِ گل سے چمن ہو سرخ ترا

    ہمارے وطن کا ماضی جہاں درخشندہ و تابناک ہے وہاں پہ ہی ہماری کوتاہیوں
    اور سہل کاریوں کے تلخ نقوش بھی ہیں یہ نقوش ہمیں خواب و خرگوش سے
    جگانے کی تحریک دیتے ہیں خدائے قدوس نے ہماری ان کوتاہیوں کے باوجود
    نھی اس سرزمین خواب و خیئال سے کیا کیا مدفن خزانے کھول دیئے یقین کئجے
    یہ دنیا کا واحد ملک جس کا رشتہ زمین اور آسمان دونوں سے قائم ہے
    اور اللہ نے چاہا تو ہمشہ قائم رہے گا

    this is where i live for
    where i fight for
    where i die for

    palwasha khan
    2,04am Rashakaiiiii Mardan
    یہ بڑی سازگار مہلت ہے
    یہ زمانہ بہت غنیمت ہے

    بے شک

    اور یہ بات کہ
    یہ دنیا کا واحد ملک جس کا رشتہ زمین اور آسمان دونوں سے قائم ہے

    بے ھد خوبسورت بات کہی آپ نے اور بالکل سچ
    اور خوبصورت نظاروں سے مزین ویڈیو ہمارے ساتھ شئیر کا بہت شکریہ

    اللہ اس پاک سر زمین کو سلامت رکھے
    جزاک اللہ
    ،آمین rose5.gif rose5.gif
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    پاکتسان کی پہلی کابینہ کا ایک نادر تصویر

    اگست اور 15 اگست کی درمینای شب لاہور پشاور اور ڈھاکہ ریڈیو اسٹیشنوں
    سے آخری بار اعلان نشر کیا۔ 12 بجے سے کچھ دیر پہلے ریڈیو پاکستان کی شناختی
    دھن بجائی گئی اور ظہور آذر کی اواز نیں انگریزی زبان میں اعلان گونجا کہ آدھی
    رات کے وقت پاکستان کی آزاد اور خود مختار مملکت معرض وجود میں آجائے گی
    رات کے ٹھیک 12 بجے ہزاروں سامعین کے کانوں میں پہلے انگریزی پھر اردو
    میں یہ لافاظ گونجے

    یہ پاکستان براڈ کاسٹنگ سروس ہے

    انگریزی میں یہ اعلان ظہور آزر اور اردو میں مصطفی علی ہمدانی نے کیا

    اور اسی وقت ریڈیو پشاور پاکستان سے آفتاب آھمد نے اردو میں اور عبداللہ جان مغموم نے
    پشتو میں اعلان آزادی کیا قران پاک کی تلاقت کا اعزاز قاری فدا محمد کو ہوا ان نشریات
    لا اختتام جناب ’’ احمد ندیم قاسمی ‘‘ کے لکھے ملی نغمے پاکستان بنانے والے پاکستان
    مبارک ہو پر ہوا
    اسلام علکیم

    جنوب مشرقی اشیا میں ریڈیائی نشریات کا اغاز 1921 میں ہوا تھا اور 1931 تک
    یہ پرائیوئٹ کمپنیوں کی تحویل میں یہ کام ہوتا رہا1931 میں حکیومت ہند نے
    ریڈیو اپنی تحویل میں لے لیا۔1947 میں جب پاکستان کا قیام وہا تو اس وقت
    صرف نو ریڈیو اسٹیشن تھے جن میں سے پاکستان کو صرف 3 ریڈیو اسٹشئین ملے

    1 ڈھاکہ 14thug.gif

    2 پشاور 14thug.gif

    3 لاہور 14thug.gif

    پاکستان کا پہلا اپنا ریڈیو اسٹیشن کراچی میں ایک فوجی بیرک کے اندر شروع ہوا تھا
    اس کی نشریات کا اغاز 14 اگست 1948 کو پاکستان کی پہلی سالگرہ پر کیا گیا تھا

    پاکستان میں اب 22 ریڈیو اسٹیشن کام کر رہے ہیں جن کا تٍصیل ہم بیان کر رہے
    ہیں پاکستان براڈ کاسٹنگ کارپوریشن ان سب اسٹیشنز کی نگران ہے

    پشاور ریڈیو اسٹیشن

    تاریخ قیام 16 جوالائی 1936

    فری کوئنسی

    540729

    اوقات کار

    ٹرانسمیٹر

    10 کلو واٹ ٹرانسمیٹر

    لاہور ریڈیو اسٹیشن

    تاریخ قیام

    16 دسمبر 1973

    فری کوئینسی

    6301080

    ٹرانسمیٹر

    10 کلو واٹ

    کراچی ریڈیو اسٹیشن

    تاریخ قیام

    14 اگست 1948

    فری کوئینسی

    639

    ٹرانمسیٹر

    10 کلوواٹ

    جاری ہے اس کا ابھی بیرونی نشریات کے لیے جو
    اسٹیشن بنے ان کا ٹارگٹ ایریا وہ بھی لکھیں گے

    ye Bhi Pakistan hi Hai
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Derawar Fort

    Derawar Fort is a large square fortress in Pakistan near Bahawalpur. The forty bastions of Derawar are visible for many miles in Cholistan Desert. The walls have a circumference of 1500 meters and stand up to thirty meters high.

    The first fort on the site was built by Rai Jajja Bhutta, whose sister was married to Deoraj, a prince of Jaisalmer. It remained in the hands of the royal family of Jaisalmer until captured and completely rebuilt by the nawabs of Bahawalpur in 1733. In 1747, the fort slipped from the hands of the Abbasis owing to Bahawal Khan’s preoccupations at Shikarpur. Nawab Mubarak Khan took the stronghold back in 1804.

    The nearby marble mosque was modeled after that in the Red Fort of Delhi. There is also a royal necropolis of the Abbasi family, which still owns the stronghold. The area is rich in archaeological artifacts associated with Ganweriwala, a vast but as-yet-unexcavated city of the Indus Valley Civilization.

    Bagh-e-Jinnah

    Bagh-e-Jinnah (Urdu: باغ جناح ) (or Jinnah’s Garden) is a historical park in the city of Lahore, Pakistan. It was formerly known as Lawrence Gardens. Today, the large green space contains a botanical garden, a mosque, and Jinnah library situated in a Victorian building.

    There are also entertainment and sports facilities within the park that comprise of an open-air theatre, a restaurant, tennis courts and the Gymkhana Cricket Ground. It is located on Lawrence Road next to Lahore Zoo, directly across from the Governor’s House on The Mall.

    Originally built as botanical garden modelled on Kew Gardens, it was named after John Lawrence, Viceroy of India from 1864 to 1869. The place used to hold his statue, which was later moved to Foyle and Londonderry College in Northern Ireland.

    Jinnah Garden Lahore that is situated on 141 Acrs at this time, earlier it was in 176 acres, but the land was given to Lahore zoo, botanical garden govt. college university Lahore and to roads alongside the garden. now it is almost the plant area except roads building is 121 Acres. it is most beautiful and well managed botanical garden in Pakistan. it has almost 150 varieties of trees, 140 types of shrubs, 50 types of creepers, 30 palms, almost 100 succulent and about same indoor along with almost all varieties of annual flowers. garden has a good name in Chrysanthemum shows, it was the first institute that started growing chrysanthemum and maximum no of varieties for it. it has 3 nurseries, 4 hilloaks in it. it has two libraries, quaid-e-azam library and Daruslam in it.

    The park hosts a famous cricket ground since 1885, built for the entertainment of government officers and civil servants. The ground maintained its Test Status from 1955 till 1959 when the venue moved to Gaddafi Stadium.
    The park receives a nostalgic mention of the 1970s and 1980s life in Bano Qudsia’s remarkable urdu novel Raja Gidh.
    The Park has a Tomb of Shia’ Sufi Known as Baba Turat Muraad Shah, with a heavy number of visitors.

    Badshahi Mosque

    The Badshahi Mosque (Punjabi, Urdu: بادشاھی مسجد), or the ‘Emperor’s Mosque’, in Lahore is the second largest mosque in Pakistan and South Asia and the fifth largest mosque in the world. It is Lahore’s most famous landmark and a major tourist attraction epitomising the beauty, passion and grandeur of the Mughal era.

    Capable of accommodating 10,000 worshippers in its main prayer hall and 100,000 in its courtyard and porticoes, it remained the largest mosque in the world from 1673 to 1986 (a period of 313 years), when overtaken in size by the completion of the Faisal Mosque in Islamabad. Today, it remains the second largest mosque in Pakistan and South Asia and the fifth largest mosque in the world after the Masjid al-Haram (Grand Mosque) of Mecca, the Al-Masjid al-Nabawi (Prophet’s Mosque) in Medina, the Hassan II Mosque in Casablanca and the Faisal Mosque in Islamabad.

    To appreciate its large size, the four minarets of the Badshahi Mosque are 13.9 ft (4.2 m) taller than those of the Taj Mahal and the main platform of the Taj Mahal can fit inside the 278,784 sq ft (25,899.9 m2) courtyard of the Badshahi Mosque, which is the largest mosque courtyard in the world.

    Construction of the Badshahi Mosque was ordered in May 1671 by the sixth Mughal Emperor, Aurangzeb, who assumed the title ‘Alamgir’. Construction took about two years and was completed in April 1673[1]. The construction work was carried out under the supervision of Aurangzeb’s foster brother Muzaffar Hussain (also known as Fidaie Khan Koka) who was appointed Governor of Lahore in May 1671 and held this post until 1675. He was also Master of Ordnance to the Emperor. The mosque was built opposite the Lahore Fort, illustrating its stature in the Mughal Empire. In conjunction with the building of the mosque, a new gate was built at the Fort, named Alamgiri Gate after the Emperor.

    Badshahi Mosque was badly damaged and misused during the reign of Maharaja Ranjit Singh, some claim it was converted into a stable for his horses,[2] other sources say it was used as a gun powder magazine for military stores.[3] During Ranjit Singh’s reign, Muslims were not allowed to enter the mosque to prey; they were only given a small place outside the mosque where they could worship.

    Attached Image

    ——————–

    Attached Image

    Attached Image

    Attached Image

    Attached Image

    Attached Image
    Attached Image
    Quaid-e-Azam with students

    اقبال ایک عظیم شاعر

    Attached Image

    اقبال ایک عظیم اسکالر

    Attached Image

    اقبال ایک عظیم اسکالر

    Attached Image

    علام اقبال 1933 ع، افغانستان میں، سر روز مسعود اور علامہ سید سلیمان ندوی کے ساتھ

    Attached Image

    علامہ اقبال سن 1933 ع اپنے بیٹے جسٹس (ر) جاوید اقبال کے ساتھ

    Attached Image

    علامہ محمد اقبال 1932 نیشنل لیگ لندن کے ایک عشائیہ میں

    Attached Image

    علام محمد اقبال، ایک گروپ فوٹو

    Attached Image

    علامہ محمد اقبال 1931 یروشلم میں ایک کانفرنس کے دوران (پہلی صف میں دائیں ہاتھ سے سب سے پہلے )

    Attached Image

    سن 1929 بنگلور میں (دائیں سے بائیں ) ابو حامد ابد الرحیم، علامہ محمد اقبال، متولی محمد ابد الجمیل

    Attached Image

    علامہ محمد اقبال سن 1931 دوسری گول میز کانفرنس لندن میں ایک پارٹی کے دوران

    Attached Image

    علامہ محمد اقبال 1930، الہ آباد کے اس تاریخی جلسے میں داخل ہوتے ہوئے جس کے تاریخی صدارتی خطبے میں انہوں نے پاکستان کا تصور دیا گیا، ان کے ساتھ کار میں سر حاجی عنداللہ ہارون بیٹھے ہے

    Attached Image
    اے خدا
    تو یہ ہے تیری خدائی !ایسی ہوتی ہے دنیا !!؟
    کس نے بیج بوئے یہاں‌-کس نے بھرے ہیں رنگ اس میں ؟ کاسنی نیلے پیلے کالے سرخ اور گلابی
    کون گوڈی کرتا ہے انکو ؟ اور کون پیاس بجھاتا ہے انکی ؟
    کس نے سجایا ہے عظیم گلدان ؟ اور کس نے رنگ چھڑک دیے ہیں ان میں پہنایئوں میں ! !؟

    پانی کا سمندر دیکھا تاھ
    ریت کا سمندر دیکھا تھا
    برف کا مسندر دیکھا تھا
    مگر کبھی نہیں سنا تاھ کہ پھولوں کا بھی سمندر ہوتا ہے
    یہ پھولوں کا سمندر تھا
    Attached Image
    Attached Image
    Post #2

    ~ Tum S aCHa KoUn hAi ~
    Group Icon

    Group: Dimond Member
    Posts: 10769
    Thank(s): 672
    Current Mood:
    Joined: 13-November 08
    From: pakistan
    Member No.: 14150

    Attached Image

    Attached Image

    Attached Image

    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image
    Attached Image

Leave a Reply to Sidhusaaheb Cancel reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this:
close-alt close collapse comment ellipsis expand gallery heart lock menu next pinned previous reply search share star